26

ناصرت کالونی: مذہبی ہم آہنگی کی زندہ مثال


ازقلم:محمد اکرام
(ملتان)

ملتان شہر کا شما ر جہاں دنیا کے قدیم شہروں میں ہو تا ہے وہیں اس شہر بے مثال کو محبت و آشتی کے لازوال پیغامات کی بدولت بھی ایک دنیا جانتی ہے۔ ملتان کینٹ میں قائم ناصرت کالونی کا ذکر کیا جائے تو یہاں بسنے والے مسلمان، ہندو اور مسیحی لوگ امن ومحبت کے ساتھ زندگی بسر کررہے ہیںجو مذہبی ہم آہنگی کی زندہ مثال ہے۔

یہ کالونی پاکستان بننے کے بعد سے قائم ہے ،جسے بنے 70سال ہوگئے ہیں۔اس کی آبادی 4سو افراد کے قریب ہے اور لوگ ایک دوسرے کے ساتھ محبت ،امن و پیار سے زندگیاں بسر کر رہے ہیں۔

کالونی کے مکینوں سے جب اْن کے آپسی تعلق کی بات کی گئی تو ہند و برادری کے شہزاد پنڈت نے بات کرتے ہوئے کہا ہندوئوں کے ہرتہوار’’گوگا پیر،راکھی بندھن،دیوالی اورہولی ‘‘پر ناصر ت کالونی کے مکین ہماری خوشی اور غم میں برابرکے شریک ہوتے ہیں۔اسی کالونی کے ساتھ ہی مسلمانوں کی مسجد ہے جہاں سے پانچ وقت کی اذان کی آواز بھی آتی ہے ہم لوگ اذان کا احترام کرتے ہیں۔ ہم لوگ مسلم بھائیوں کے ساتھ مل کر امن کے ساتھ زندگی بسر کررہے ہیں۔مسلم بھائیوں کاکوئی بھی تہوار ’’میٹھی عید،بڑی عید ‘‘ہو انہیں مبارک باد بھی دیتے ہیں اور گلے بھی ملتے ہیں ۔
۔
ہندو برادری کے ہی خالد مدد لال نے گفتگو کرتے ہوئے کہا ،ناصرت کالونی میں قائم مندر میںہندو برادری کے لوگ آزادانہ اور امن کے ساتھ اپنی مذہبی رسومات انجام دیتے ہیں۔ہم لوگ اپنے تہوار جوش وخروش کے ساتھ مناتے ہیں جس میں دیگر مذاہب کے لوگ بھی ہمارے ساتھ شریک ہوتے ہیں اور ہمیں مبارک باد دیتے ہیں۔

مسیحی برادری کے قمر مسیح جو واپڈا میں ملازم ہیں، ان کا کہنا تھا میں ناصر ت کالونی میں عرصہ 15سال سے رہائش پذیر ہوں۔ اس کالونی کے لوگ امن پسند ہیں اورآس پاس کی آبادی مسلم ہے۔اور سب لوگ امن کے ساتھ زندگی گزار رہے ہیں لوگ ایک دوسرے کی خوشی و غمی میں بھر پور شرکت کرتے ہیں۔

ایک اور شہری ، شازیہ نے بات کرتے ہوئے کہا میں 25سال سے ناصر ت کالونی میں رہائش پذیر ہوں ،ہم عرصہ دراز سے کالونی میں امن کے ساتھ رہ رہے ہیں۔ہمارے مذہبی تہوارخواہ وہ ’’کرسمس‘‘ہو یا ’’ایسٹر ‘‘ ناصرت کالونی میں رہنے والے دیگر مذاہب سے تعلق رکھنے والے لوگ ہمیں مبارک باد دیتے ہیں اور پھولوں کے گلدستے پیش کرتے ہیں۔کچھ فرلانگ کے فاصلے پر کیتھولک چرچ ہے جہاں ہم آزادی کے ساتھ عبادت کرتے ہیں۔

مذکورہ مثالیں اس بات کا بین ثبوت ہیں کہ ناصرت کالونی کے مکین نہ صرف بین المذاہب ہم آہنگی کی زندہ و جاوید مثال ہیں بلکہ یہ اس بات کا بھی مضبوط ثبوت ہیں کہ پاکستان میں رہنے والے مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے افراد پوری طرح سے آزاد اور زندگی کے ہر شعبہ میں اپنا کردار ادا کرتے نظر آتے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں