36

دباؤ کے باوجود محکمہ تعلیم میں اصلاحات لائے ہیں: صوبائی وزیر تعلیم

سکردو(ویب ڈیسک) صوبائی وزیر تعلیم حاجی ابراہیم ثنائی نے اعلان کیاہے کہ محکمہ تعلیم گلگت بلتستان میں سینکڑوں نئے اساتذہ بھرتی کئے جارہے ہیں آسامیوں کو عید الفطر کے فوری بعد مشتہر کیا جائیگا سات سو سے زائد نئے اساتذہ کی بھرتیوں کے بعد سکولوں میں اساتذہ کا فقدان ختم ہوجائے گا نئی بھرتیاں سی ٹی ایس پی کے تحت میرٹ پر ہونگی کسی کے ساتھ کوئی ناانصافی نہیں ہوگی جس کے پاس جتنی قابلیت ہے اس کو اسی حساب سے ملازمت ملے گی اب میرٹ اور قانون سے ہٹ کر کوئی تقرری نہیں ہوگی.

انہوں نے کہاکہ نئے اساتذہ کی بھرتیوں میں سائنس اساتذہ کو ترجیح دی جائے گی پڑھے لکھے نوجوان ٹیسٹ انٹرویو کی تیاری شروع کریں بڑی آسامیاں پیدا کی جارہی ہیں ہم نے ایجوکیشن میں بڑی اصلاحات لائی ہیں خدا گواہ ہے کہ تمام تر دباو کے باوجود تعلیم کے نظام کو درست کیا ہے تمام ڈائریکٹرز,ڈپٹی ڈائریکٹرز اور دیگر آفیسران کو ہدایت دی گئی ہے کہ سیاسی دباو میں آکر اساتذہ کو ادھر ادھر نہ کریں کیوں کہ اس عمل سے تعلیم متاثر ہوگی آئندہ سرمائی چھٹیوں میں ہی اساتذہ کے تبادلے ہونگے.

تعلیمی سیشن کے آغاز کے بعد اساتذہ کے تبادلے ہونے سے سکولوں کی ناقص کارکردگی کی ذمہ داری اٹھانے کیلئے کوئی تیار نہیں ہوگا اساتذہ ایک دوسرے پر الزامات لگاکر بری الزمہ ہونے کی کوشش کریں گے اس بلیم گیم کو ختم کرنے کیلئے آئندہ اساتذہ کے تبادلے جنوری فروری کی چھٹیوں میں کرنے کا فیصلہ کیاگیا ہے .

انہوں نے کہاکہ اساتذہ کی تربیت کیلئے خصوصی پروگرامز ترتیب دئیے گئے ہیں جو اساتذہ کارکردگی کامظاہرہ کریں گے انہیں خصوصی انعامات سے نوازا جائے گا ہماری حکومت بننے سے قبل سرکاری سکولوں میں 86 ہزاربچے تعلیم حاصل کررہے تھے ہماری بہتر پالیسیوں کی بدولت آج ڈھائی لاکھ کے لگ بھگ بچے سکولوں میں داخل ہوگئے ہیں بچوں کی بڑھتی ہوئی شرح کے پیش نظر نئے اساتذہ بھرتی کرنے کا فیصلہ کیاگیا ہے اساتذہ کی تقرریوں میں تاخیر نہیں ہوگی انہوں نے کہاکہ نئی اصلاحات کی بدولت سرکاری سکولوں پر والدین کا اعتماد بحال ہوگیا ہے اب والدین اپنے بچوں کو پرائیویٹ سکولوں سے نکال کر سرکاری سکولوں میں داخل کرارہے ہیں.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں