30

سپیکراسمبلی کا سکردو میں بجلی اور پانی کے بحران کا نوٹس

گلگت (ویب ڈیسک) سپیکر گلگت بلتستان اسمبلی حاجی فدا محمد ناشاد نے سکردو شہر میں بجلی اور پانی کے بحران کا نوٹس لیتے ہوئے گزشتہ روز شہریوں کے ہمراہ سدپارہ ڈیم کا دورہ کیا ہے اور ڈیم میں پانی کی سطح کم ہونے پر گہر ی تشویش کا اظہار کیا ہے۔سپیکر نے اس موقع پر وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمان سے بذریعہ فون رابطہ کر کے انہیں حالات سے آگاہ کر دیا ۔

سپیکر نے وزیر اعلیٰ کو بتایا کہ سدپارہ جھیل میں پانی کی سطح مقپون دور کی تعمیرکردہ بند کی سطح سے بھی خطرناک حد تک نیچے گر چکی ہے۔جسکی وجہ سے سکردو شہر اور اردگرد کے علاقوں میں پینے کے پانی کا قحط پڑ چکا ہے جبکہ بجلی کے بحران نے شہریوں کو پہلے ہی پریشان کر رکھا ہے۔ان مسائل کا واحد حل شتونگ نالے کوسدپارہ ڈیم کی جانب موڑنے کا تجدیدی پی سی ون کو منظوری کرانا ہے۔جسکو 14فروری 2019 کو وفاقی وزارت منصوبہ بندی تک پہنچایا گیا ہے اور اس منصوبے کام بلا تاخیر شروع کرنے کی اشد ضرورت ہے۔

انہوں نے چیف منسٹر پرزور دیا ہے کہ وہ وزارت منصوبہ بند ی کے حکام سے ترجیحی بنیادوں پر رابطہ کرکے یہ منصونہ منظور کرانے میں اپنا کردار ادا کریں۔سپیکر نے اس موقع پرلی گئی سدپارہ ڈیم کی تصاویر بھی چیف منسٹر کا بذریعہ واٹس ایب ارسال کیا ہے جس میںجھیل کا بنیادی بند واضح نظر آرہا ہے۔سپیکر نے ساتھ ہی سیکریٹری منصوبہ بندی گلگت بلتستان سید ابرار حسین کو بھی اس مسئلے پر توجہ دینے پر زور دیا ہے تاکہ سکردو شہر اور گردونواح کے مکینوں کو درپیش مشکلات کا اذالہ کیا جاسکے۔

سپیکر نے مزید کہا کہ اگر ان مسائل پر توجہ بروقت نہیں دی گئی تو آنے والے دنوں میں اس حوالے سے امن و امان کی صورت حال خراب ہوسکتی ہے کیونکہ ہر سال مختلف اضلاع سے سینکڑوں خاندان سکردو شہر میں منتقل ہورہے ہیںجس سے اس طرح کے حل طلب مسائل کے حجم میں روز بروز اضافہ ہوتا جارہا ہے۔سپیکر نے کہا ہے اس مسئلے کے حل کے ہم سب کو سنجیدہ ہو کر ضرور ی اقدامات کر نے کی اشد ضرورت ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں